ابی حنیفہؓ سے بڑھ کر کوئی حدیث کی تفسیر کا عالم نہ تھا

امام المحدثین و مجتہد ابو یوسف رحمہ اللہ کی گواہی کہ امام اعظم ابی حنیفہؓ سے بڑھ کر کوئی حدیث کی تفسیر کا عالم نہ تھا انکے دور میں

بقلم:اسد الطحاوی

امام ابی یوسف جنکے بارے میں حافظ الحدیث و ناقد الرجال امام ذھبیؒ سیر اعلام میں فرماتے ہیں :

141 – القاضي أبو يوسف يعقوب بن إبراهيم الأنصاري *
هو الإمام، المجتهد ، العلامة، المحدث، قاضي القضاة، أبو يوسف يعقوب بن إبراهيم الکوفی

قال أحمد بن حنبل: أول ما كتبت الحديث، اختلفت إلى أبي يوسف،وكان أميل إلى المحدثين من أبي حنيفة ومحمد.
قال إبراهيم بن أبي داود البرلسي: سمعت ابن معين يقول:
ما رأيت في أصحاب الرأي أثبت في الحديث، ولا أحفظ، ولا أصح رواية من أبي يوسف.
وروى: عباس، عن ابن معين: أبو يوسف صاحب حديث، صاحب سنة.
قال ابن المديني: ما أخذ على أبي يوسف إلا حديثه في الحجر، وكان صدوقا.
وقال النسائي في (طبقات الحنفية) : وأبو يوسف ثقة.

امام ذھبی امام ابو یوسف کاتعارف کرواتے ہوئے لکھتے ہیں :

کہ وہ امام مجتہد ابو یوسف یعقوب بن ابراہیم الکوفی ہیں
امام احمد فرماتے ہیں کہ میں سب سے پہلے جس کے پاس علم حدیث لکھنے کے لیے گیا وہ ابو یوسف ہیں وہ محدثین کی طرف زیادہ مائل تھے ابو حنیفہ و محمد بن الحسن کی نسبت

امام یحییٰ بن معین فرماتے ہیں :
میں نے اصحاب الرائے میں حدیث میں ثبت اور حافظ اور اصح (فصاحت) والا نہیں دیکھا ابو یوسف سے بڑھ کر

امام ابن معین پھر فرماتے ہیں :
ابو یوسف صاحب حدیث اور صاحب سنت تھے یعنی حدیث اور سنت کو جاننے والے تھے

امام علی بن مدینی فرماتے ہیں :
میں نے ابو یوسف سے صرف ایک حدیث اخذ کی ہے اور وہ صدوق تھے
۔
امام نسائی فرماتے ہیں : ابو یوسف ثقہ تھے

اسکے علاوہ بہت ساری مداح و ثناء اور توثیقات لکھنے کے بعد امام ذھبی آگے فرماتے ہیں :

قلت: بلغ أبو يوسف من رئاسة العلم ما لا مزيد عليه، وكان الرشيد يبالغ في إجلاله.

یعنی میں (امام ذھبی) کہتا ہوں :
امام ابو یوسف علم کی اس حدوں تک پہنچے جس سے آگے مزید کوئی حد نہیں تھی (سبحان اللہ )

یعنی امام ابو یوسف رحمہ اللہ علم و فقہ کے اس سمندر کو عبور کر لیا تھا کہ دنیا میں کوئی علم ایسا نہ رہا جس سے امام ابو یوسف مطلع نہ ہو سکے
(سیر اعلام النبلاء برقم:۱۴۱)

********

امام ابن ابی العوام اپنی تصنیف فضائل أبي حنيفة وأخباره ومناقبه سند صحیح سے روایت کرتے ہیں :

حدثني محمد بن أحمد بن حماد قال: ثنا أحمد بن القاسم البرتي قال: حدثني ابن أبي رزمة قال: أخبرني خالد بن صبيح قال: سمعت أبا يوسف يقول: ما رأيت أحداً أعلم بتفسير الحديث من أبي حنيفة.

امام ابو بشر الدولابی(ثقہ ) فرماتے ہیں مجھے بیان کیا امام احمد بن القاسم البرتی(ثقہ) نے وہ کہتے ہیں مجھے بیان کیا امام عبدالعزیز ابن ابی زرمہ (ثقہ) نے وہ کہتے ہیں مجھے خبر دی خالد بن صبیع(ثقہ) نے
وہ فرماتے ہیں میں نے امام ابویوسف رحمہ اللہ سے سنا:

ابو یوسف کہتے ہیں میں نے حدیث کی تفسیر کا امام ابو حنیفہؓ سے بڑا کوئی عالم نہیں دیکھا

اس سند کے سارے رجال ثقہ ہیں

ہمارے تو امام اعظم کے صاحبین پر فخر کرنا بڑے نصیب کی بات ہے تو امام اعم کا مقام تو سبحان اللہ

تحقیق: اسد الطحاوی الحنفی البریلوی 9اپریل 2020

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s